Thursday, January 17, 2008

بنگلوری انگریزی و حیدرآبادی اردو

بنگلور کے اردو اخبارات انگریزی الفاظ کو کچھ اسطرح لکھتے ہیں؛
bat کو بَیٹ کی بجائے بیَاٹ

حیدر آباد کے عوام اردو الفاظ کو انگریزی میں کچھ اسطرح لکھنا پسند فرماتے ہیں؛
خوبانی کو Qubani اور ایک جگہ تو صاف طور پر Qurbani لکھا گیا تھا

مجھے اِس بلاگ پر اپنا ارسال کردہ ایک لطیفہ یاد آرہا ہے۔

Labels:

9 Comments:

At 10:05 AM , Blogger indscribe said...

Khuub. Mera bhi yahi experience raha hai, Hyderabad ke taalluq se.

Bangalore ke halaat se muttilaa kareN. Kya Paasbaan, Salaar nazara aate haiN aur nasheman zamzam ke kya haal hain. Sahara shuroo ho gaya hai.

Aap kahaan rahe itne arsay tak?

 
At 2:54 AM , Blogger urdudaaN said...

KHoosh aamadeed Adnan bhai,

Banglor ki koi khabar sunaane se filHaal qasir hooN. Wahaan kuchh urdu-zadah afraad se mere qareebi taAlluqaat haiN, jinse maaloomaat milne ki tawaqqo hai.

Rahi mere GHaaeb hone ki baat to:
maiN makaan, mulaazimat aor amreeki daore meiN aisa masroof huwa keh KHadshah paida hogaya tha keh kaheen blogspot waale blog hazaf na kerdeN. KHair ab inshaAllah naaGHah kam hi karooNga.

 
At 9:27 PM , Anonymous Anonymous said...

Hamari Bangalore ki Urdu sebse pyari Urdu.
Hyderabadi bhi yahi kehte hain: Hamari Hyderabadi Urdu sebse faseeh urdu.
Aur Lukno wale bhai aise hi

Shuaib
Bangalore se ek Bharathi

 
At 10:29 PM , Anonymous urdudaan said...

جناب شعیب بنگلوری بھارتھی صاحب
آپ نے صحیح کہا کہ ہر کوئی اپنی زبان (بولی) کے بہتر ہونے کے دعوے کرتا ہے۔
فصیح و بلیغ ہونے کے دعوے کرنا غالباً انسانی فطرت کا حصّہ ہے۔
اگر لوگ اپنی بولی پر نادم ہونے لگیں تو بولیاں ہی مٹ جائیں!

 
At 5:59 AM , Blogger Muhammad Shakir Aziz said...

انگریزی کے الفاظ کو اردو میں لکھنے میں تلفظ کا مسئلہ پیش آجاتا ہے۔ ہم پاکستان میں Gas کو گیس لکھتے ہین جبکہ حیدر آباد کے کسی کالم نگار کے کالم میں گیاس لکھا ہوا پڑھا اسے۔

 
At 2:31 AM , Anonymous اجمل said...

نمعلوم میری نظر پہلے غلط جگہ پر کیوں پڑتی ہے ۔ ۔ ۔ آپ نے خوش آمدِید لکھا ہے ۔ یہ فارسی کا لفظ ہے خوش آمدَید

 
At 12:20 AM , Blogger urdudaaN said...

شاکر عزیز صاحب
میں آپ سے اتّفاق کرتا ہوں کہ کسی بھی زبان کو دوسرے رسم الخط میں لکھنے میں صحیح تلفّظ کی ادائیگی کا مسئلہ پیش آتا ہے۔
لیکن میرا اشارہ علاقائی اثر کی طرف تھا۔ بیٹ کو بیاٹ لکھنا علاقائی رجحان ہے اردو کی کمزوری نہیں۔
خوبانی کو قوبانی/قربانی لکھنا تو محض علاقائی اثر ہے؛ حالانکہ وہ جانتے ہیں کہ صحیح تلفّظ خوبانی ہے اور یہ بھی کہ انگریزی میں اسے بہتریں کیسے لکھا جا سکتا ہے۔
school
کو اسکول لکھنا اردو رسم الخط کی خامی ہوسکتی ہے لیکن بیاٹ اور قربانی کیلئے نا تو اردو ذمہ دار ہے اور نہ ہی اردو والے عام طور پر ایسا لکھتے ہیں۔

 
At 12:22 AM , Blogger urdudaaN said...

خوش آمدَید چچا جان
تصحیح کی امیدوں کے ساتھ شکریہ

 
At 3:14 AM , Anonymous Sadia Komal said...

مائیکرو سافٹ کو بہی اردو نستعلیق شامل کرنی چاہھے

 

Post a Comment

Subscribe to Post Comments [Atom]

<< Home