Friday, February 01, 2008

جُمعہ کا بَیان اور دُعا

آج کا بیان ایک سُنّی قسم کا شخص دے رہا تھا؛

میں اس بیان کے آخری چند جملےہی سُن سکا، جس میں قابلِ ذکر یہ فقرہ تھا؛
"اور وہی لاغر اونٹنی چلنے لگا"

نماز کے بعد دعا کچھ اس پیرائے میں "عطا فرمائی" گئی؛
٭) اللّہ ہماری کوتاہیوں کو دور عطا فرمائے۔
٭) اللّہ تمام مسلمانوں کو کامیابی نصیب عطا فرمائے۔
٭) اللّہ تمام مسلمانانِ عالم کی حفاظت عطا فرمائے۔


خدا اُن صاحب کی دعاؤں کو قبولیت سے ذیادہ تصحیح "نصیب عطا فرمائے"۔
:(

6 Comments:

At 7:28 AM , Blogger حیدرآبادی said...

بھائی پاشا! ہم حیدرآبادیوں میں سے بہت سے تو خوبانی کو قربانی لکھتے ہی نہیں بلکہ بولتے بھی ہیں۔

 
At 6:30 AM , Anonymous urdudaan said...

آپکا تبصرہ غالباً پچھلے مضمون http://urdudaan.blogspot.com/2008/01/blog-post.html کیلئے تھا، خیر

میں نے ایک لطیفہ سنا تھا جس میں ایک حیدرآبادی صاحب کہتے ہیں؛ مجھے کیا قبر تھی کہ یہاں خبراں ہی خبراں ہیں!

 
At 8:36 AM , Anonymous Mohib Alvi said...

بہترین دعا کی آپ نے ان کے حق میں ویسے آپ فانٹ اردو ایشیا نسخ کیوں نہیں استعمال کرتے

 
At 12:51 PM , Anonymous urdudaan said...

maiN aise font istEmaal karna chaahta hooN jo windows par Haazir hoN. iske ilaawah jis font meiN saare Haroof waazeh nazar aaeN. aaKHiruzzkir shart to ashiya nasKH poori naheeN karta albattah awwaluzzikr shart poori karta hai. soch raha hooN kyun na yeh majaaz saarif ko dooN keh woh asia nasKH meiN bhi dekh sake. Raae keliye shukriyah.

 
At 12:53 PM , Anonymous Anonymous said...

maaf karen awwal wo aaKHir ulTe hogae. :) (Urdudaan)

 
At 3:26 AM , OpenID ibnehidayat said...

سچ ہے ہم کو دعا مانگنے کا سلیقہ بھی نہ رہا۔ اللہ ہمیں مانگنے کا 'نصیب' عطا فرمائے

 

Post a Comment

Subscribe to Post Comments [Atom]

<< Home